Supreme Court Orders Abrar to Modify

May 28, 2007

As I feared at the time of Abrar’s new Album’s Launch that it will get a ban or will go into a controversy.

Supreme Court today has ordered Abrar ul Haq to modify the song and remove the words ‘Parveen‘ & ‘Namkeen‘. Court in its ordered has said that new generation listens keenly to Abrar’s Songs, so Abrar should be very careful with the wordings & lyrics using in his songs and he should produce songs which are positive in nature.

Advertisements

Ustad Asad Amanat Ali Passes away

April 9, 2007

Ustad Asad Amanat Ali Khan passed away last night in London. He was in London for his medical checkup, he suffered a heart attack and couldn’t succumb and passed away. May his soul rest in Peace (Inna Lillahi wa Inna eLaihe rajeoon).

He was son of Ustad Amanat Ali Khan, nephew of Ustad Fateh Ali & Ustad Hamid Ali Khan and was elder brother of Shafqat Amanat Ali Khan.

He belonged to the famous Patila Gharana of music. After the demise of his father, he gained popularity by singing famous ghazal of Insha jee, ‘Insha Jee Utho abb kooch karo – iss shehar mein dil ko lagaana kya’ (Insha, Lets depart from the city – its not worth staying).

The song which gained him the most was ‘Umra`n Langhiya`n Pabba`n Bhaar’ (Life went away problems).

Click to see video

Beside Ghazal, Asad Amanat Ali Khan was master of filmi songs, thumri, folk songs as well as in classical music – which is idiosyncratic to his family. Asad started his career in Radio Pakistan, Lahore.

Apart from him, Patiala Gharana (family) produced musicians in the likes of Ustad Amanat Ali Khan, Ustad Fateh Ali Khan, Ustad Hamid Ali Khan, Ustad Barray Fateh Ali Khan, Ustad Ashiq Ali Khan and Ustad Akhter Hussain.

Pakistan is now left with very few in classical music.


an Image says a 1000 word – CJP & COAS

March 22, 2007

It says it all. CJP Iftikhar Chaudhary in Army House confronting COAS Parvez Musharraf.

Click Image to view full size Image for better screen viewing – kindly spread the truth and circulate it to as many people as you can.

  

ABhi Tau Ham Nahin Bolay

Yet, its only you
and yet its only your allocution,

yet its only your rare breed of words,
yet only your tempting sentences,
only your lips are open yet,
yet you yourself are the only evidence,

yet you are the lord of the lords
yet you are the ruler

yet you are the only source of information
yet its only you have all the vocabulary

yet its only you have the decisions,
yet its only you are the decider,

yet you are the one who holds yesterday & today,
yet only you have all the means,
yet only you are advertising yourself

Its nothing!

your anger will show up,
it’ll speak out of your body & soul,

yet you are the only honoured; but in only your own eyes
yet only you sing your own songs in the highest nodes,

yet you have the authority  over time & space
its only you who have uttered yet
you have uttered whatever you wanted to

whatever you felt like you said
whatever you liked the most – you have said

but

when its all done
all spoken out

just remember

that I have not said anything yet.


Pakistan – Martial Law & Ahmed Faraz’s Poem

March 12, 2007

 A few decades ago Ahmed Faraz crafted this poem against that time’s dictator in-chief, martial law administrator Gen Zia ul Haq – But as in Pakistan, neither does our present change nor our future shall change – we can still read & relate this poem. I have already posted the poem earlier in my blog – but again.

 in urdu Ahmed Faraz nay yea nazam aaj say koi 25-30 baras pehlay uss waqt kay aamir kay khilaaf likhi thi – lekin pakistan mein hamaari qismat mein jamhooriyat kahan? na hamaaray halaat puraanay hotay hain aur na hamaari nazmain purani hoti hain. aap aaj bhi iss nazam ko parh kar iss daur e haazir kay aamir kay khilaaf nawishta e deewar hi paeyn gay (its written on the wall).

you may require urdu font to properly see this – font can be downloaded from http://www.bbc.co.uk/urdu

میرے غنیم نے مجھکو پیام بھیجا ہے،

کہ حلقہ زن ہیں میرے گرد لشکری اُسکے،

فصیل شہر کے ہر برج، ہر مینارے پر،

کماں بدست ایستادہ ہیں عسکری اُسکے 

وہ برق لہر بجھا دی گئی ہے جسکی تپش،

وجود خاک میں آتش فشاں جگاتی تھی،

بچھا دیا گیا بارود اسکے پانی میں،

وہ جوئے آب جو میری گلی کو آتی تھی، 

سبھی دریدہ دہن اب بدن دریدہ ہوئے،

سپرد دار و رسن سارے سر کشیدہ ہوئے، 

تمام صوفی و سالک، سبھی شیوخ و امام،

امید لطف پہ ایوان کجلاہ میں ہیں، 

معززین عدالت حلف اٹھانے کو،

مثال سائل مبرم نشستہ راہ میں ہیں،

تم اہل حرف کے پندار کے ثنا گر ہو،

وہ آسمان ہنر کے نجوم سامنے ہیں،

بس اس قدر تھا کہ دربار سے بلاوا تھا،

گداگران سخن کے ہجوم سامنے ہیں، 

قلندران وفا کی اساس تو دیکھو،

تمھارے ساتھ ہے کون؟‌آس پاس تو دیکھو، 

تو شرط یہ ہے، جو جاں کی امان چاہتے ہو،

تو اپنے لوح و قلم قتل گاہ میں رکھ دو،

وگرنہ اب کہ نشانہ کمان داروں کا،

بس ایک تم ہو، تو غیرت کو راہ میں رکھ دو، 

یہ شرط نامہ جو دیکھا، تو ایلچی سے کہا،

اسے خبر نہیں تاریخ کیا سکھاتی ہے،

کہ رات جب کسی خورشید کو شہید کرے،

تو صبح اک نیا سورج تراش لاتی ہے،

تو یہ جواب ہے میرا میرے عدو کے لیے،

کہ مجھکو حرص کرم ہے نہ خوف خمیازہ

 اسے ہے سطوت شمشیر پے گھمنڈ بہت،

اسے شکوہ قلم کا نہیں ہے اندازہ،

میرا قلم نہیں کردار اس محافظ کا،

جو اپنے شہر کو محصور کر کے ناز کرے،

میرا قلم نہیں کاسئہ کسی گداگر کا،

جو غاصبوں کو قصیدوں سے سرفراز کرے، 

 

میرا قلم نہیں اوزار اس نقب زن کا،

جو اپنے گھر کی چھت میں شگاف ڈالتا ہے،

میرا قلم نہیں اس دزدِنیم شب کا رفیق،

جو بے چراغ گھروں پر کمند اچھالتا ہے، 

میرا قلم نہیں تسبیح اس مبلغ کی،

جو بندگی کا بھی ہر دم حساب رکھتا ہے،

میرا قلم نہیں میزان ایسے عادل کی،

 جو اپنے چہرے پہ دوہرا نقاب رکھتا ہے، 

میرا قلم تو امانت ہے میرے لوگوں کی،

میرا قلم تو عدالت میرے ضمیر کی ہے،

اسی لیے تو جو لکھا تپاک جاں سے لکھا،

جبھی تو لوچ کماں کا، زباں تیر کی ہے 

میں کٹ گروں یا سلامت رہوں، یقیں ہے مجھے،

کہ یہ حصار ستم کوئی تو گرائے گا،

تمام عمر کی ایذا نصیبیوں کی قسم،

میرے قلم کا سفر رائگاں نہ جائے گا۔۔۔۔۔ 


Verses of the Day – Allama Iqbal (RA)

February 15, 2007

Na Utha Phir Koi Rumi Ajam Kay Laala Zaaro`n Say,
Wohi Aab o Gill e Ira`n, Wohi Tabrez Hay Saaqi,

No Other Rumi has born again in the gardens of Ajam (world other than Arab)
Same is the air & soil of Iran, Same is the Tabrez

Nahin Hay Naa Umeed Iqbal Apni Kisht e Veera`n Say,
Zara Namm Ho Tau Yea Matti Bohat Zarkhaiz Hay Saaqi

Iqbal isn’t hopless of his deserted land,
a little intent & this soil is very much fertile potent

<<forgive me for my pathetic translation>>

Baal e Jibreel – Allama Dr. Sir Muhammad Iqbal (RA)

-Aasim


Muhaasra – nazam – ahmed faraz

February 1, 2007

میرے غنیم نے مجھکو پیام بھیجا ہے،

کہ حلقہ زن ہیں میرے گرد لشکری اُسکے،

فصیل شہر کے ہر برج، ہر مینارے پر،

کماں بدست ایستادہ ہیں عسکری اُسکے 

وہ برق لہر بجھا دی گئی ہے جسکی تپش،

وجود خاک میں آتش فشاں جگاتی تھی،

بچھا دیا گیا بارود اسکے پانی میں،

وہ جوئے آب جو میری گلی کو آتی تھی، 

سبھی دریدہ دہن اب بدن دریدہ ہوئے،

سپرد دار و رسن سارے سر کشیدہ ہوئے، 

تمام صوفی و سالک، سبھی شیوخ و امام،

امید لطف پہ ایوان کجلاہ میں ہیں، 

معززین عدالت حلف اٹھانے کو،

مثال سائل مبرم نشستہ راہ میں ہیں،

تم اہل حرف کے پندار کے ثنا گر ہو،

وہ آسمان ہنر کے نجوم سامنے ہیں،

بس اس قدر تھا کہ دربار سے بلاوا تھا،

گداگران سخن کے ہجوم سامنے ہیں، 

قلندران وفا کی اساس تو دیکھو،

تمھارے ساتھ ہے کون؟‌آس پاس تو دیکھو، 

تو شرط یہ ہے، جو جاں کی امان چاہتے ہو،

تو اپنے لوح و قلم قتل گاہ میں رکھ دو،

وگرنہ اب کہ نشانہ کمان داروں کا،

بس ایک تم ہو، تو غیرت کو راہ میں رکھ دو، 

یہ شرط نامہ جو دیکھا، تو ایلچی سے کہا،

اسے خبر نہیں تاریخ کیا سکھاتی ہے،

کہ رات جب کسی خورشید کو شہید کرے،

تو صبح اک نیا سورج تراش لاتی ہے،

تو یہ جواب ہے میرا میرے عدو کے لیے،

کہ مجھکو حرص کرم ہے نہ خوف خمیازہ

 اسے ہے سطوت شمشیر پے گھمنڈ بہت،

اسے شکوہ قلم کا نہیں ہے اندازہ،

میرا قلم نہیں کردار اس محافظ کا،

جو اپنے شہر کو محصور کر کے ناز کرے،

میرا قلم نہیں کاسئہ کسی گداگر کا،

جو غاصبوں کو قصیدوں سے سرفراز کرے، 

 

میرا قلم نہیں اوزار اس نقب زن کا،

جو اپنے گھر کی چھت میں شگاف ڈالتا ہے،

میرا قلم نہیں اس دزدِنیم شب کا رفیق،

جو بے چراغ گھروں پر کمند اچھالتا ہے، 

میرا قلم نہیں تسبیح اس مبلغ کی،

جو بندگی کا بھی ہر دم حساب رکھتا ہے،

میرا قلم نہیں میزان ایسے عادل کی،

 جو اپنے چہرے پہ دوہرا نقاب رکھتا ہے، 

میرا قلم تو امانت ہے میرے لوگوں کی،

میرا قلم تو عدالت میرے ضمیر کی ہے،

اسی لیے تو جو لکھا تپاک جاں سے لکھا،

جبھی تو لوچ کماں کا، زباں تیر کی ہے 

میں کٹ گروں یا سلامت رہوں، یقیں ہے مجھے،

کہ یہ حصار ستم کوئی تو گرائے گا،

تمام عمر کی ایذا نصیبیوں کی قسم،

میرے قلم کا سفر رائگاں نہ جائے گا۔۔۔۔۔